Font by Mehr Nastaliq Web

aaj ik aur baras biit gayā us ke baġhair

jis ke hote hue hote the zamāne mere

رد کریں ڈاؤن لوڈ شعر
Abrar Azmi's Photo'

ابرار اعظمی

1936 - 2020 | اعظم گڑہ, انڈیا

ابرار اعظمی کے اشعار

کمرے میں دھواں درد کی پہچان بنا تھا

کل رات کوئی پھر مرا مہمان بنا تھا

تمام رات وہ پہلو کو گرم کرتا رہا

کسی کی یاد کا نشہ شراب جیسا تھا

پرندے فضاؤں میں پھر کھو گئے

دھواں ہی دھواں آشیانوں میں تھا

مجھے بھی فرصت نظارۂ جمال نہ تھی

اور اس کو پاس کسی اور کے بھی جانا تھا

آوازوں کا بوجھ اٹھائے صدیوں سے

بنجاروں کی طرح گزارہ کرتا ہوں

شاید تمہاری یاد مرے پاس آ گئی

یا ہے مرے ہی دل کی صدا سوچنا پڑا

چہروں کے میلے جسموں کے جنگل تھے ہر جگہ

ان میں کہیں بھی کوئی مگر آدمی نہ تھا

میں نے کل توڑا اک آئینہ تو محسوس ہوا

اس میں پوشیدہ کوئی چیز تھی جوہر جیسی

خوش نما دیوار و در کے خواب ہی دیکھا کئے

جسم صحرا ذہن ویراں آنکھ گیلی ہو گئی

Recitation

Jashn-e-Rekhta | 8-9-10 December 2023 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate - New Delhi

GET YOUR PASS
بولیے