Abul Hasanat Haqqi's Photo'

ابو الحسنات حقی

کانپور, ہندوستان

213
Favorite

باعتبار

یہ سچ ہے اس سے بچھڑ کر مجھے زمانہ ہوا

مگر وہ لوٹنا چاہے تو پھر زمانہ بھی کیا

میں اپنی ماں کے وسیلے سے زندہ تر ٹھہروں

کہ وہ لہو مرے صبر و رضا میں روشن ہے

بے نیاز دہر کر دیتا ہے عشق

بے زروں کو لعل و زر دیتا ہے عشق

وہ مہربان نہیں ہے تو پھر خفا ہوگا

کوئی تو رابطہ اس کو بحال رکھنا ہے

میں قتل ہو کے بھی شرمندہ اپنے آپ سے ہوں

کہ اس کے بعد تو سارا زوال ہے اس کا

یہ بات الگ ہے کسی دھارے پہ نہیں ہے

دنیا کسی کمزور اشارے پہ نہیں ہے

نقش تو سارے مکمل ہیں اب الجھن یہ ہے

کس کو آباد کرے اور کسے ویرانی دے

میری وحشت بھی سکوں نا آشنا میری طرح

میرے قدموں سے بندھی ہے ذمہ داری اور کیا

مجھ کو درویش سمجھنے والا

خوش گمانی کا صلا چاہتا ہے

خود اپنی لوح تمنا پہ کھل کے دیکھوں گا

کسی کے جبر نے لکھا تھا رائیگاں مجھ کو

کبھی وہ خوش بھی رہا ہے کبھی خفا ہوا ہے

کہ سارا مرحلہ طے مجھ سے برملا ہوا ہے

ضمیر خاک شہہ دو سرا میں روشن ہے

مرا خدا مرے حرف دعا میں روشن ہے

دیوار کا بوجھ بام پر ہے

یہ گھر بھی ہوا خراب کیسا

میں اپنے زہر سے واقف ہوں وہ سمجھتا نہیں

ہے میرے کیسۂ صد کام میں شرافت بھی

وہ بے خبر ہے مری جست و خیز سے شاید

یہ کون ہے جو مقابل مرے کھڑا ہوا ہے

پھول کی پتی پہ کوئی زخم ڈال

آئنے میں رنگ کا اظہار کر

وہ کشتی سے دیتے تھے منظر کی داد

سو ہم نے بھی گھر کو سفینہ کیا

میرے جنوں کا سلسلہ مرحلہ وار ہو گیا

پہلے زمین بجھ گئی بعد میں آسماں بجھا

وہ آ رہا تھا مگر میں نکل گیا کہیں اور

سو زخم ہجر سے بڑھ کر عذاب میں نے دیا

بدن خود اپنی ہی تجسیم کر نہیں پاتے

قریب آیا تو آنکھوں کو خواب میں نے دیا

دور رہتا ہے مگر جنبش لب بوس و کنار

ڈوبتا رہتا ہے دریا میں کنارا کیا کیا

شب کو ہر رنگ میں سیلاب تمہارا دیکھیں

آنکھ کھل جائے تو دریا نہ کنارا دیکھیں

اپنے منظر سے الگ ہوتا نہیں ہے کوئی رنگ

اپنی آنکھوں کے سوا باد بہاری اور کیا

بجتی ہوئی خون کی روانی

خواہش کی گرفت میں بدن ہے

جانے کیا صورت حالات رقم تھی اس میں

جو ورق چاک ہوا اس کو دوبارا دیکھیں

مجھے بھی رفتہ رفتہ آ گیا ہے

خود اپنے کام کو دشوار کرنا

حقیؔٔ دل گرفتہ کے بس میں نہ جانے کب نہیں

ہجر میں شاد کام تھا وصل کے درمیاں بجھا

کبھی نہ خالی ملا بوئے ہم نفس سے دماغ

تمام باغ میں جیسے کوئی چھپا ہوا ہے

وہ ایک ڈوبتی آواز باز گشت کہ آ

سوال میں نے کیا تھا جواب میں نے دیا

یہ عجز ہے کہ قناعت ہے کچھ نہیں کھلتا

بہت دنوں سے وہ خیر و خبر سے باہر ہے