Akhtar Ali Akhtar's Photo'

اختر علی اختر

1894 - 1950 | حیدر آباد, ہندوستان

حیدرآباد کے معروف شاعر، جوش کے ہم عصر، دونوں کے درمیان معاصرانہ چشمک بھی رہی، اپنی طویل نظم ’قول فیصل‘ کے لیے معروف

حیدرآباد کے معروف شاعر، جوش کے ہم عصر، دونوں کے درمیان معاصرانہ چشمک بھی رہی، اپنی طویل نظم ’قول فیصل‘ کے لیے معروف

فریب جلوہ کہاں تک بروئے کار رہے

نقاب اٹھاؤ کہ کچھ دن ذرا بہار رہے

مجھی کو پردۂ ہستی میں دے رہا ہے فریب

وہ حسن جس کو کیا جلوہ آفریں میں نے

تم نے ہر ذرے میں برپا کر دیا طوفان شوق

اک تبسم اس قدر جلووں کی طغیانی کے ساتھ

گفتگوئے صورت و معنی ہے عنوان حیات

کھیلتے ہیں وہ مری فطرت کی حیرانی کے ساتھ

چٹک میں غنچے کی وہ صورت جاں فزا تو نہیں

سنی ہے پہلے بھی آواز یہ کہیں میں نے