Lutf-ur-rahman's Photo'

لطف الرحمن

1941 | پٹنہ, ہندوستان

کس سے امید کریں کوئی علاج دل کی

چارہ گر بھی تو بہت درد کا مارا نکلا

میں در بدر ہوں ابھی اپنی جستجو میں بہت

میں اپنے لہجے کو انداز دے رہا ہوں ابھی

میں خود ہی اپنے تعاقب میں پھر رہا ہوں ابھی

اٹھا کے تو میری راہوں سے راستا لے جا

جاتے جاتے دیا اس طرح دلاسا اس نے

بیچ دریا میں کوئی جیسے کنارہ نکلا

تمام عمر مرا مجھ سے اختلاف رہا

گلہ نہ کر جو کبھی تیرا ہم نوا نہ ہوا

اب نہ وہ ذوق وفا ہے نہ مزاج غم ہے

ہو بہو گرچہ کوئی تیری مثال آیا تھا

ترا تو کیا کہ خود اپنا بھی میں کبھی نہ رہا

مرے خیال سے خوابوں کا سلسلہ لے جا

میں کہ اپنا ہی پتہ پوچھ رہا ہوں سب سے

کھو گئی جانے کہاں عمر گزشتہ میری