Parveen Fana Syed's Photo'

پروین فنا سید

1936 - 2010 | راول پنڈی, پاکستان

پروین فنا سید

غزل 27

اشعار 3

میری آنکھوں میں اترنے والے

ڈوب جانا تری عادت تو نہیں

تیری پہچان کے لاکھوں انداز

سر جھکانا ہی عبادت تو نہیں

کھل کے رو لوں تو ذرا جی سنبھلے

مسکرانا ہی مسرت تو نہیں

 

کتاب 2

حرف وفا

 

1947

تمنا کا دوسرا قدم

 

1985

 

تصویری شاعری 2

درد کی رات نے یہ رنگ بھی دکھلائے ہیں میری پلکوں پہ ستارے سے اتر آئے ہیں دل کے ویرانے میں کس یاد کا جھونکا گزرا کس نے اس ریت میں یہ پھول سے مہکائے ہیں ہم نے سوچا تری آنکھیں تو اٹھیں لب تو ہلیں اس لیے ہم تری محفل سے چلے آئے ہیں جن سے انسان کے زخموں کا مداوا نہ ہوا آج وہ چاند ستاروں کی خبر لائے ہیں چند سکوں کی طلب حسرت_بے_جا تو نہ تھی پھر بھی ہم پھیلے ہوئے ہاتھ سے گھبرائے ہیں

 

مزید دیکھیے

متعلقہ شعرا

  • شہناز پروین سحر شہناز پروین سحر ہم عصر

"راول پنڈی" کے مزید شعرا

  • اختر ہوشیارپوری اختر ہوشیارپوری
  • صابر ظفر صابر ظفر
  • جلیل عالیؔ جلیل عالیؔ
  • باقی صدیقی باقی صدیقی
  • افضل منہاس افضل منہاس
  • حسن عباس رضا حسن عباس رضا
  • منظور عارف منظور عارف
  • یامین یامین
  • نوید فدا ستی نوید فدا ستی
  • مصطفیٰ راہی مصطفیٰ راہی