غزل 9

اشعار 13

پہلے کیا تھا جو کیا کرتے تھے تعریف مری

اب ہوا کیا جو برا ہو گیا اچھا ہو کر

ہوا ہے عشق میں کم حسن اتفاق ایسا

کہ دل کو یار تو دل یار کو پسند ہوا

  • شیئر کیجیے

آپ کو کھو کے تم کو ڈھونڈھ لیا

حوصلہ تھا یہ میرے ہی دل کا

نہیں ہے فرصت یہیں کے جھگڑوں سے فکر عقبیٰ کہاں کی واعظ

عذاب دنیا ہے ہم کو کیا کم ثواب ہم لے کے کیا کریں گے

  • شیئر کیجیے

یہ بات بات پہ زاہد جو ٹوٹ جاتا ہے

دل حزیں بھی ہمارا ترا وضو کیا ہے

  • شیئر کیجیے

کتاب 1

دیوان زیبا