فاطمہ حسن کے 10 منتخب شعر

کراچی میں مقیم ممتاز شاعرہ

کیا کہوں اس سے کہ جو بات سمجھتا ہی نہیں

وہ تو ملنے کو ملاقات سمجھتا ہی نہیں

فاطمہ حسن

سکون دل کے لیے عشق تو بہانہ تھا

وگرنہ تھک کے کہیں تو ٹھہر ہی جانا تھا

فاطمہ حسن

میں نے ماں کا لباس جب پہنا

مجھ کو تتلی نے اپنے رنگ دیے

فاطمہ حسن

بہت گہری ہے اس کی خامشی بھی

میں اپنے قد کو چھوٹا پا رہی ہوں

فاطمہ حسن

بچھڑ رہا تھا مگر مڑ کے دیکھتا بھی رہا

میں مسکراتی رہی میں نے بھی کمال کیا

فاطمہ حسن

اس کے پیالے میں زہر ہے کہ شراب

کیسے معلوم ہو بغیر پیے

فاطمہ حسن

دکھائی دیتا ہے جو کچھ کہیں وہ خواب نہ ہو

جو سن رہی ہوں وہ دھوکا نہ ہو سماعت کا

فاطمہ حسن

اور کوئی نہیں ہے اس کے سوا

سکھ دیے دکھ دیے اسی نے دیے

فاطمہ حسن

الجھ کے رہ گئے چہرے مری نگاہوں میں

کچھ اتنی تیزی سے بدلے تھے ان کی بات کے رنگ

فاطمہ حسن

کب اس کی فتح کی خواہش کو جیت سکتی تھی

میں وہ فریق ہوں جس کو کہ ہار جانا تھا

فاطمہ حسن