محبوب خزاں کے 10 منتخب شعر

پاکستان میں نئی غزل کے ممتاز شاعر

ہم آپ قیامت سے گزر کیوں نہیں جاتے

جینے کی شکایت ہے تو مر کیوں نہیں جاتے

محبوب خزاں

ایک محبت کافی ہے

باقی عمر اضافی ہے

محبوب خزاں

دیکھتے ہیں بے نیازانہ گزر سکتے نہیں

کتنے جیتے اس لیے ہوں گے کہ مر سکتے نہیں

محبوب خزاں

تمہیں خیال نہیں کس طرح بتائیں تمہیں

کہ سانس چلتی ہے لیکن اداس چلتی ہے

محبوب خزاں

دیکھو دنیا ہے دل ہے

اپنی اپنی منزل ہے

محبوب خزاں

الجھتے رہنے میں کچھ بھی نہیں تھکن کے سوا

بہت حقیر ہیں ہم تم بڑی ہے یہ دنیا

محبوب خزاں

گھبرا نہ ستم سے نہ کرم سے نہ ادا سے

ہر موڑ یہاں راہ دکھانے کے لیے ہے

محبوب خزاں

زخم بگڑے تو بدن کاٹ کے پھینک

ورنہ کانٹا بھی محبت سے نکال

محبوب خزاں

کوئی رستہ کہیں جائے تو جانیں

بدلنے کے لیے رستے بہت ہیں

محبوب خزاں

مری نگاہ میں کچھ اور ڈھونڈنے والے

تری نگاہ میں کچھ اور ڈھونڈتا ہوں میں

محبوب خزاں