Asar Sahbai's Photo'

اثر صہبائی

1901 - 1963

معروف شاعر، رومان اور سماجی شعورکی حامل نظمیں، غزلیں اور رباعیاں کہیں

معروف شاعر، رومان اور سماجی شعورکی حامل نظمیں، غزلیں اور رباعیاں کہیں

85
Favorite

باعتبار

یہ حسن دل فریب یہ عالم شباب کا

گویا چھلک رہا ہے پیالہ شراب کا

تمہاری یاد میں دنیا کو ہوں بھلائے ہوے

تمہارے درد کو سینے سے ہوں لگائے ہوے

جس حسن کی ہے چشم تمنا کو جستجو

وہ آفتاب میں ہے نہ ہے ماہتاب میں

تیرے شباب نے کیا مجھ کو جنوں سے آشنا

میرے جنوں نے بھر دیے رنگ تری شباب میں

ساری دنیا سے بے نیازی ہے

واہ اے مست ناز کیا کہنا

الٰہی کشتئ دل بہہ رہی ہے کس سمندر میں

نکل آتی ہیں موجیں ہم جسے ساحل سمجھتے ہیں

سجدہ کے داغ سے نہ ہوئی آشنا جبیں

بیگانہ وار گزرے ہر اک آستاں سے ہم

آہ کیا کیا آرزوئیں نذر حرماں ہو گئیں

روئیے کس کس کو اور کس کس کا ماتم کیجئے

جہاں پہ چھایا سحاب مستی برس رہی ہے شراب مستی

غضب ہے رنگ شباب مستی کہ رند و زاہد بہک رہے ہیں