Bekhud Dehlvi's Photo'

بیخود دہلوی

1863 - 1955 | دلی, ہندوستان

داغ دہلوی کے شاگرد

داغ دہلوی کے شاگرد

غزل 58

اشعار 75

ادائیں دیکھنے بیٹھے ہو کیا آئینہ میں اپنی

دیا ہے جس نے تم جیسے کو دل اس کا جگر دیکھو

راہ میں بیٹھا ہوں میں تم سنگ رہ سمجھو مجھے

آدمی بن جاؤں گا کچھ ٹھوکریں کھانے کے بعد

  • شیئر کیجیے

دل محبت سے بھر گیا بیخودؔ

اب کسی پر فدا نہیں ہوتا

  • شیئر کیجیے

آئنہ دیکھ کر وہ یہ سمجھے

مل گیا حسن بے مثال ہمیں

  • شیئر کیجیے

بات وہ کہئے کہ جس بات کے سو پہلو ہوں

کوئی پہلو تو رہے بات بدلنے کے لیے

  • شیئر کیجیے

کتاب 6

اسرار بیخود

انتخاب کلام مع حیات وخدمات

1980

در شہوار بیخود

 

1930

گفتار بیخود

 

1938

مرآۃ الغالب

 

 

ننگ و ناموس

 

1999

نیا کلام

دیوان گفتار بیخود

 

 

تصویری شاعری 3

جادو ہے یا طلسم تمہاری زبان میں تم جھوٹ کہہ رہے تھے مجھے اعتبار تھا

راہ میں بیٹھا ہوں میں تم سنگ_رہ سمجھو مجھے آدمی بن جاؤں_گا کچھ ٹھوکریں کھانے کے بعد

دل تو لیتے ہو مگر یہ بھی رہے یاد تمہیں جو ہمارا نہ ہوا کب وہ تمہارا ہوگا

 

آڈیو 17

آپ ہیں بے_گناہ کیا کہنا

ایسا بنا دیا تجھے قدرت خدا کی ہے

بزم_دشمن میں بلاتے ہو یہ کیا کرتے ہو

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

"دلی" کے مزید شعرا

  • مرزا غالب مرزا غالب
  • شیخ ظہور الدین حاتم شیخ ظہور الدین حاتم
  • شاہ نصیر شاہ نصیر
  • آبرو شاہ مبارک آبرو شاہ مبارک
  • شیخ ابراہیم ذوقؔ شیخ ابراہیم ذوقؔ
  • تاباں عبد الحی تاباں عبد الحی
  • بہادر شاہ ظفر بہادر شاہ ظفر
  • محمد رفیع سودا محمد رفیع سودا
  • ظہیرؔ دہلوی ظہیرؔ دہلوی
  • دتا تریہ کیفی دتا تریہ کیفی