noImage

حبیب موسوی

224
Favorite

باعتبار

دل لیا ہے تو خدا کے لئے کہہ دو صاحب

مسکراتے ہو تمہیں پر مرا شک جاتا ہے

مے کدہ ہے شیخ صاحب یہ کوئی مسجد نہیں

آپ شاید آئے ہیں رندوں کے بہکائے ہوئے

گلوں کا دور ہے بلبل مزے بہار میں لوٹ

خزاں مچائے گی آتے ہی اس دیار میں لوٹ

رندوں کو وعظ پند نہ کر فصل گل میں شیخ

ایسا نہ ہو شراب اڑے خانقاہ میں

قدموں پہ ڈر کے رکھ دیا سر تاکہ اٹھ نہ جائیں

ناراض دل لگی میں جو وہ اک ذرا ہوئے

میکدے کو جا کے دیکھ آؤں یہ حسرت دل میں ہے

زاہد اس مٹی کی الفت میری آب و گل میں ہے

جا سکے نہ مسجد تک جمع تھے بہت زاہد

میکدے میں آ بیٹھے جب نہ راستا پایا

جو لے لیتے ہو یوں ہر ایک کا دل باتوں باتوں میں

بتاؤ سچ یہ چالاکی تمہیں کس نے سکھائی تھی

لب جاں بخش تک جا کر رہے محروم بوسہ سے

ہم اس پانی کے پیاسے تھے جو تڑپاتا ہے ساحل پر

بہت دنوں میں وہ آئے ہیں وصل کی شب ہے

موذن آج نہ یا رب اٹھے اذاں کے لئے

یہ ثابت ہے کہ مطلق کا تعین ہو نہیں سکتا

وہ سالک ہی نہیں جو چل کے تا دیر و حرم ٹھہرے

کرو باتیں ہٹاؤ آئنہ بس بن چکے گیسو

انہیں جھگڑوں ہی میں اس دن بھی کتنی رات آئی تھی

زباں پر ترا نام جب آ گیا

تو گرتے کو دیکھا سنبھلتے ہوئے

چاندنی چھپتی ہے تکیوں کے تلے آنکھوں میں خواب

سونے میں ان کا دوپٹہ جو سرک جاتا ہے

تھوڑی تھوڑی راہ میں پی لیں گے گر کم ہے تو کیا

دور ہے مے خانہ یہ زاد سفر شیشہ میں ہے

اصل ثابت ہے وہی شرع کا اک پردہ ہے

دانے تسبیح کے سب پھرتے ہیں زناروں پر

دل میں بھری ہے خاک میں ملنے کی آرزو

خاکستری ہوا ہے ہماری قبا کا رنگ

شمع کا شانۂ اقبال ہے توفیق کرم

غنچہ گل ہوتے ہی خود صاحب زر ہوتا ہے

طالب بوسہ ہوں میں قاصد وہ ہیں خواہان جان

یہ ذرا سی بات ہے ملتے ہی طے ہو جائے گی

کسی صورت سے ہوئی کم نہ ہماری تشویش

جب بڑھی دل سے تو آفاق میں پھیلی تشویش

تیزیٔ بادہ کجا تلخیٔ گفتار کجا

کند ہے نشتر ساقی سے سنان واعظ

فصل گل آئی اٹھا ابر چلی سرد ہوا

سوئے مے خانہ اکڑتے ہوئے مے خوار چلے

جب کہ وحدت ہے باعث کثرت

ایک ہے سب کا راستا واعظ

تیرہ بختی کی بلا سے یوں نکلنا چاہیے

جس طرح سلجھا کے زلفوں کو الگ شانہ ہوا

خدا کرے کہیں مے خانہ کی طرف نہ مڑے

وہ محتسب کی سواری فریب راہ رکی

غربت بس اب طریق محبت کو قطع کر

مدت ہوئی ہے اہل وطن سے جدا ہوئے

بتان سرو قامت کی محبت میں نہ پھل پایا

ریاضت جن پہ کی برسوں وہ نخل بے ثمر نکلے

کسی ہیں بھبتیاں مسجد میں ریش واعظ پر

کہیں نہ میری طبیعت خدا گواہ رکی

دشت و صحرا میں حسیں پھرتے ہیں گھبرائے ہوئے

آج کل خانۂ امید ہے ویراں کس کا

پلا ساقی مئے گل رنگ پھر کالی گھٹا آئی

چھپانے کو گنہ مستوں کے کعبہ کی ردا آئی

کیا ہوا ویراں کیا گر محتسب نے مے کدہ

جمع پھر کل شام تک ہر ایک شے ہو جائے گی

تیرا کوچہ ہے وہ اے بت کہ ہزاروں زاہد

ڈال کے سبحہ میں یاں رشتۂ زنار چلے

یوں آتی ہیں اب میرے تنفس کی صدائیں

جس طرح سے دیتا ہے کوئی نوحہ گر آواز

حضرت واعظ نہ ایسا وقت ہاتھ آئے گا پھر

سب ہیں بے خود تم بھی پی لو کچھ اگر شیشہ میں ہے

محتسب تو نے کیا گر جام صہبا پاش پاش

جبہ و عمامہ ہم کر دیں گے سارا پاش پاش

لکھ کر مقطعات میں دیں ان کو عرضیاں

جو دائرے تھے کاسۂ دست گدا ہوئے

برہمن شیخ کو کر دے نگاہ ناز اس بت کی

گلوئے زہد میں تار نظر زنار بن جائے

ناصح یہ وعظ و پند ہے بے کار جائے گا

ہم سے بھی بادہ کش ہیں کہیں پارسا ہوئے