Mukhtar Siddiqui's Photo'

مختار صدیقی

1919 - 1972

مختار صدیقی

غزل 13

نظم 6

اشعار 11

میری آنکھوں ہی میں تھے ان کہے پہلو اس کے

وہ جو اک بات سنی میری زبانی تم نے

عبرت آباد بھی دل ہوتے ہیں انسانوں کے

داد ملتی بھی نہیں خوں شدہ ارمانوں کی

  • شیئر کیجیے

بستیاں کیسے نہ ممنون ہوں دیوانوں کی

وسعتیں ان میں وہی لاتے ہیں ویرانوں کی

  • شیئر کیجیے

پھیرا بہار کا تو برس دو برس میں ہے

یہ چال ہے خزاں کی جو رک رک کے تھم گئی

کبھی فاصلوں کی مسافتوں پہ عبور ہو تو یہ کہہ سکوں

مرا جرم حسرت قرب ہے تو یہی کمی یہاں سب میں ہے

  • شیئر کیجیے

کتاب 2

 

ویڈیو 3

This video is playing from YouTube

ویڈیو کا زمرہ
کلام شاعر بہ زبان شاعر

مختار صدیقی

مختار صدیقی

نور_سحر کہاں ہے اگر شام_غم گئی

مختار صدیقی

متعلقہ شعرا

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

GET YOUR FREE PASS
بولیے