غزل 20

اشعار 18

عجیب درد کا رشتہ تھا سب کے سب روئے

شجر گرا تو پرندے تمام شب روئے

ابھی پھر رہا ہوں میں آپ اپنی تلاش میں

ابھی مجھ سے میرا مزاج ہی نہیں مل رہا

اب آسمان بھی کم پڑ رہے ہیں اس کے لیے

قدم زمین پر رکھا تھا جس نے ڈرتے ہوئے

کھول دیتے ہیں پلٹ آنے پہ دروازۂ دل

آنے والے کا ارادہ نہیں دیکھا جاتا

رات رو رو کے گزاری ہے چراغوں کی طرح

تب کہیں حرف میں تاثیر نظر آئی ہے

کتاب 1

دیے میں جلتی رات

 

2003

 

"اسلام آباد" کے مزید شعرا

  • افتخار عارف افتخار عارف
  • کشور ناہید کشور ناہید
  • جوشؔ ملیح آبادی جوشؔ ملیح آبادی
  • احمد فراز احمد فراز
  • اعجاز گل اعجاز گل
  • ضیا جالندھری ضیا جالندھری
  • حارث خلیق حارث خلیق
  • نور بجنوری نور بجنوری
  • سرفراز زاہد سرفراز زاہد
  • توصیف تبسم توصیف تبسم