Zafar Gorakhpuri's Photo'

ظفر گورکھپوری

1935 - | ممبئی, ہندوستان

ممتاز ترقی پسند شاعر

غزل 21

اشعار 20

میں ظفرؔ تا زندگی بکتا رہا پردیس میں

اپنی گھر والی کو اک کنگن دلانے کے لیے

فلک نے بھی نہ ٹھکانا کہیں دیا ہم کو

مکاں کی نیو زمیں سے ہٹا کے رکھی تھی

اپنے اطوار میں کتنا بڑا شاطر ہوگا

زندگی تجھ سے کبھی جس نے شکایت نہیں کی

  • شیئر کیجیے

دوہا 6

بھوکی بھیڑ ہے جسم میں بس سیپی بھر خون

چرواہے کو دودھ دے یا تاجر کو اون

  • شیئر کیجیے

ہرے بھرے کچھ دھیان تھے اور نہ تھا کچھ پاس

پاؤں تلے سے کھینچ لی کس نے ٹھنڈی گھاس

  • شیئر کیجیے

سکھی ری جب یہ ٹھان لی جانا ہے ساجن دوار

کیا سانسوں کی بیڑیاں کیا تن کی تلوار

  • شیئر کیجیے

ای- کتاب 6

گوکھرو کے پھول

 

1986

ہلکی، ٹھنڈی، تازہ ہوا

 

2009

مٹی کو ہنسانا ہے

 

2012

تیشہ

 

1962

زمین کے قریب

 

2001

انتساب،سرونج

ظفر گورکھپوری نمبر

 

 

ویڈیو 32

This video is playing from YouTube

سیکشن سے ویڈیو
کلام شاعر بہ زبان شاعر
At a mushaira

ظفر گورکھپوری

Majboori ke mausam me bhi jeena padta hai

ظفر گورکھپوری

Masiha ungliyaan teri

ظفر گورکھپوری

مرا قلم مرے جذبات مانگنے والے

ظفر گورکھپوری

میری اک چھوٹی سی کوشش تجھ کو پانے کے لیے

ظفر گورکھپوری

سیکشن سے ویڈیو
دیگر ویڈیو
Ab ke saal poonam mein

مہدی حسن

Aise besharam aashiq hain ye aaj ke

Yusuf Azad

Baharen agar tum se daman bachaye

پنکج اداس

Chalta phirta Taj Mahal

پنکج اداس

Dhoop hai kya aur saaya kya hai

جگجیت سنگھ

Ek taraf uska ghar ek taraf maikada

پنکج اداس

Fasle gul hai sajaa hai maikhana

نصرت فتح علی خان

Iraada ho atal to maujzaa aisa bhi hota hai

نامعلوم

Ishq mein kya kya mere junoon ki

محمد رفیع

Jab meri yaad sataae mujhe khat likhna

نامعلوم

Jahan pehli baar mile the hum

انورادھا پوڈوال

Jism chhooti hai jab aa aa ke pawan baarish mein

نامعلوم

Kaise raat kati kaise din beeta

پنکج اداس

Mahol bemazaa hai tere pyar ke baghair

پنکج اداس

Main aisa khoobsoorat rang hoon

نامعلوم

Mere baad kidhar jaaegi tanhaee

نامعلوم

Mile kisi se nazar to samjho ghazal hui

نامعلوم

Mujhe maut di ke hayaat di

نامعلوم

Pathar kaha gaya kabhi sheesha kaha gaha

پنکج اداس

اشک_غم آنکھ سے باہر بھی نہیں آنے کا

نامعلوم

بدن کجلا گیا تو دل کی تابانی سے نکلوں_گا

نامعلوم

پل پل جینے کی خواہش میں کرب_شام_و_سحر مانگا

نامعلوم

جب اتنی جاں سے محبت بڑھا کے رکھی تھی

نامعلوم

جو اپنی ہے وہ خاک_دل_نشیں ہی کام آئے_گی

نامعلوم

دن کو بھی اتنا اندھیرا ہے مرے کمرے میں

نامعلوم

سلسلے کے بعد کوئی سلسلہ روشن کریں

نامعلوم

کون یاد آیا یہ مہکاریں کہاں سے آ گئیں

نامعلوم

کے مزید شاعر "ممبئی"

  • راجندر سنگھ بیدی راجندر سنگھ بیدی
  • ذاکر خان ذاکر ذاکر خان ذاکر
  • قمر صدیقی قمر صدیقی
  • اختر آزاد اختر آزاد
  • کرشن چندر کرشن چندر
  • راجہ مہدی علی خاں راجہ مہدی علی خاں
  • اظہر ہاشمی اظہر ہاشمی
  • حسن کمال حسن کمال
  • زہرا قرار زہرا قرار
  • رفیعہ شبنم عابدی رفیعہ شبنم عابدی

Added to your favorites

Removed from your favorites