Amjad Islam Amjad's Photo'

امجد اسلام امجد

1944 | لاہور, پاکستان

پاکستانی ٹی وی سیریلوں کے لئے مشہور

پاکستانی ٹی وی سیریلوں کے لئے مشہور

2.02K
Favorite

باعتبار

جس طرف تو ہے ادھر ہوں گی سبھی کی نظریں

عید کے چاند کا دیدار بہانہ ہی سہی

لکھا تھا ایک تختی پر کوئی بھی پھول مت توڑے مگر آندھی تو ان پڑھ تھی

سو جب وہ باغ سے گزری کوئی اکھڑا کوئی ٹوٹا خزاں کے آخری دن تھے

کہاں آ کے رکنے تھے راستے کہاں موڑ تھا اسے بھول جا

وہ جو مل گیا اسے یاد رکھ جو نہیں ملا اسے بھول جا

سوال یہ ہے کہ آپس میں ہم ملیں کیسے

ہمیشہ ساتھ تو چلتے ہیں دو کنارے بھی

وہ ترے نصیب کی بارشیں کسی اور چھت پہ برس گئیں

دل بے خبر مری بات سن اسے بھول جا اسے بھول جا

اس کے لہجے میں برف تھی لیکن

چھو کے دیکھا تو ہاتھ جلنے لگے

سائے ڈھلنے چراغ جلنے لگے

لوگ اپنے گھروں کو چلنے لگے

جہاں ہو پیار غلط فہمیاں بھی ہوتی ہیں

سو بات بات پہ یوں دل برا نہیں کرتے

ہر بات جانتے ہوئے دل مانتا نہ تھا

ہم جانے اعتبار کے کس مرحلے میں تھے

اس نے آہستہ سے جب پکارا مجھے

جھک کے تکنے لگا ہر ستارا مجھے

یہ جو حاصل ہمیں ہر شے کی فراوانی ہے

یہ بھی تو اپنی جگہ ایک پریشانی ہے

چہرے پہ مرے زلف کو پھیلاؤ کسی دن

کیا روز گرجتے ہو برس جاؤ کسی دن

ہمیں ہماری انائیں تباہ کر دیں گی

مکالمے کا اگر سلسلہ نہیں کرتے

گزریں جو میرے گھر سے تو رک جائیں ستارے

اس طرح مری رات کو چمکاؤ کسی دن

سنا ہے کانوں کے کچے ہو تم بہت سو ہم

تمہارے شہر میں سب سے بنا کے رکھتے ہیں

پھر آج کیسے کٹے گی پہاڑ جیسی رات

گزر گیا ہے یہی بات سوچتے ہوئے دن

پیڑوں کی طرح حسن کی بارش میں نہا لوں

بادل کی طرح جھوم کے گھر آؤ کسی دن

بڑے سکون سے ڈوبے تھے ڈوبنے والے

جو ساحلوں پہ کھڑے تھے بہت پکارے بھی

تمہی نے کون سی اچھائی کی ہے

چلو مانا کہ میں اچھا نہیں تھا

تم ہی نے پاؤں نہ رکھا وگرنہ وصل کی شب

زمیں پہ ہم نے ستارے بچھا کے رکھے تھے

ایک نظر دیکھا تھا اس نے آگے یاد نہیں

کھل جاتی ہے دریا کی اوقات سمندر میں

بچھڑ کے تجھ سے نہ جی پائے مختصر یہ ہے

اس ایک بات سے نکلی ہے داستاں کیا کیا

قدم اٹھا ہے تو پاؤں تلے زمیں ہی نہیں

سفر کا رنج ہمیں خواہش سفر سے ہوا

بے وفا تو وہ خیر تھا امجدؔ

لیکن اس میں کہیں وفا بھی تھی

کمال حسن ہے حسن کمال سے باہر

ازل کا رنگ ہے جیسے مثال سے باہر

کیا ہو جاتا ہے ان ہنستے جیتے جاگتے لوگوں کو

بیٹھے بیٹھے کیوں یہ خود سے باتیں کرنے لگتے ہیں

بات تو کچھ بھی نہیں تھیں لیکن اس کا ایک دم

ہاتھ کو ہونٹوں پہ رکھ کر روکنا اچھا لگا

دوریاں سمٹنے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

رنجشوں کے مٹنے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

صدیاں جن میں زندہ ہوں وہ سچ بھی مرنے لگتے ہیں

دھوپ آنکھوں تک آ جائے تو خواب بکھرنے لگتے ہیں

مانا نظر کے سامنے ہے بے شمار دھند

ہے دیکھنا کہ دھند کے اس پار کون ہے

ہر سمندر کا ایک ساحل ہے

ہجر کی رات کا کنارا نہیں

حادثہ بھی ہونے میں وقت کچھ تو لیتا ہے

بخت کے بگڑنے میں دیر کچھ تو لگتی ہے

کس قدر یادیں ابھر آئی ہیں تیرے نام سے

ایک پتھر پھینکنے سے پڑ گئے کتنے بھنور

اتنے خدشے نہیں ہیں رستوں میں

جس قدر خواہش سفر میں ہیں

گاہے گاہے ہی سہی امجدؔ مگر یہ واقعہ

یوں بھی لگتا ہے کہ دنیا کا خدا کوئی نہیں

دام خوشبو میں گرفتار صبا ہے کب سے

لفظ اظہار کی الجھن میں پڑا ہے کب سے

سائے لرزتے رہتے ہیں شہروں کی گلیوں میں

رہتے تھے انسان جہاں اب دہشت رہتی ہے

وہ سامنے ہے پھر بھی دکھائی نہ دے سکے

میرے اور اس کے بیچ یہ دیوار کون ہے

تیر آیا تھا جدھر یہ مرے شہر کے لوگ

کتنے سادا ہیں کہ مرہم بھی وہیں دیکھتے ہیں

جیسے بارش سے دھلے صحن گلستاں امجدؔ

آنکھ جب خشک ہوئی اور بھی چہرا چمکا

کوئی چلے تو زمیں ساتھ ساتھ چلتی ہے

یہ راز ہم پہ عیاں گرد رہ گزر سے ہوا

شہر سخن میں ایسا کچھ کر عزت بن جائے

سب کچھ مٹی ہو جاتا ہے عزت رہتی ہے

یوں تو ہر رات چمکتے ہیں ستارے لیکن

وصل کی رات بہت صبح کا تارا چمکا

زندگی درد بھی دوا بھی تھی

ہم سفر بھی گریز پا بھی تھی

شبنمی آنکھوں کے جگنو کانپتے ہونٹوں کے پھول

ایک لمحہ تھا جو امجدؔ آج تک گزرا نہیں

ترے فراق کی صدیاں ترے وصال کے پل

شمار عمر میں یہ ماہ و سال سے کچھ ہیں

کچھ ایسی بے یقینی تھی فضا میں

جو اپنے تھے وہ بیگانے لگے ہیں

فضا میں تیرتے رہتے ہیں نقش سے کیا کیا

مجھے تلاش نہ کرتی ہوں یہ بلائیں کہیں

لہریں اٹھ اٹھ کے مگر اس کا بدن چومتی تھیں

وہ جو پانی میں گیا خوب ہی دریا چمکا

اس کی گلیوں میں رہے گرد سفر کی صورت

سنگ منزل نہ بنے راہ کا پتھر نہ ہوئے