غزل 9

نظم 4

 

اشعار 13

میں کنارے پہ کھڑا ہوں تو کوئی بات نہیں

بہتا رہتا ہے تری یاد کا دریا مجھ میں

جسم اپنے فانی ہیں جان اپنی فانی ہے فانی ہے یہ دنیا بھی

پھر بھی فانی دنیا میں جاوداں تو میں بھی ہوں جاوداں تو تم بھی ہو

ہم نے جن کو سچا جانا

نکلیں وہ سب باتیں جھوٹی

Added to your favorites

Removed from your favorites