Jameeluddin Aali's Photo'

جمیل الدین عالی

1925 - 2015 | کراچی, پاکستان

اپنے دوہوں کے لیے مشہور

اپنے دوہوں کے لیے مشہور

اردو والے ہندی والے دونوں ہنسی اڑائیں

ہم دل والے اپنی بھاشا کس کس کو سکھلائیں

ہر اک بات میں ڈالے ہے ہندو مسلم کی بات

یہ نا جانے الھڑ گوری پریم ہے خود اک ذات

عالؔی اب کے کٹھن پڑا دیوالی کا تیوہار

ہم تو گئے تھے چھیلا بن کر بھیا کہہ گئی نار

دریا دریا گھومے مانجھی پیٹ کی آگ بجھانے

پیٹ کی آگ میں جلنے والا کس کس کو پہچانے

ساجن ہم سے ملے بھی لیکن ایسے ملے کہ ہائے

جیسے سوکھے کھیت سے بادل بن برسے اڑ جائے

برقع پوش پٹھانی جس کی لاج میں سو سو روپ

کھل کے نہ دیکھی پھر بھی دیکھی ہم نے چھاؤں میں دھوپ

کچے محل کی رانی آئی رات ہمارے پاس

ہونٹ پہ لاکھا گال پہ لالی آنکھیں بہت اداس

بابو گیری کرتے ہو گئے عالؔی کو دو سال

مرجھایا وہ پھول سا چہرہ بھورے پڑ گئے بال

نا کوئی اس سے بھاگ سکے اور نا کوئی اس کو پائے

آپ ہی گھاؤ لگائے سمے اور آپ ہی بھرنے آئے

دھیرے دھیرے کمر کی سختی کرسی نے لی چاٹ

چپکے چپکے من کی شکتی افسر نے دی کاٹ

پہلے کبھی نہیں گزری تھی جو گزری اس شام

سب کچھ بھول چکے تھے لیکن یاد رہا اک نام

نیند کو روکنا مشکل تھا پر جاگ کے کاٹی رات

سوتے میں آ جاتے وہ تو نیچی ہوتی بات

اک گہرا سنسان سمندر جس کے لاکھ بہاؤ

تڑپ رہی ہے اس کی اک اک موج پہ جیون ناؤ

شہر میں چرچا عام ہوا ہے ساتھ تھے ہم اک شام

مجھے بھی جانیں تجھے بھی جانیں لوگ کریں بد نام

روز اک محفل اور ہر محفل ناریوں سے بھرپور

پاس بھی ہوں تو جان کے بیٹھیں عالؔی سب سے دور

پیار کرے اور سسکی بھرے پھر سسکی بھر کر پیار

کیا جانے کب اک اک کر کے بھاگ گئے سب یار

ایک بدیسی نار کی موہنی صورت ہم کو بھائی

اور وہ پہلی نار تھی بھیا جو نکلی ہرجائی

روٹی جس کی بھینی خوشبو ہے ہزاروں راگ

نہیں ملے تو تن جل جائے ملے تو جیون آگ

اس دیوانی دوڑ میں بچ بچ جاتا تھا ہر بار

اک دوہا سو اسے بھی لے جا تو ہی خوش رہ یار

دوہے کبت کہہ کہہ کر عالؔی من کی آگ بجھائے

من کی آگ بجھی نہ کسی سے اسے یہ کون بتائے

سورؔ کبیرؔ بہاریؔ میراؔ ؔرحمنؔ تلسیؔ داس

سب کی سیوا کی پر عالؔی گئی نہ من کی پیاس

Added to your favorites

Removed from your favorites