Jyoti Azad Khatri's Photo'

جیوتی آزاد کھتری

گوالیار, انڈیا

جیوتی آزاد کھتری

غزل 23

نظم 2

 

اشعار 16

اس سے باتیں تو بہت کرنی تھیں پر سوچ لیا

اس کی ہر بات پہ کہنا ہے کوئی بات نہیں

  • شیئر کیجیے

میں سامنے ہوں ابھی گفتگو کرو مجھ سے

کہ بعد میں مری تصویر دیکھتے رہنا

  • شیئر کیجیے

اسی کے چہرے پہ آنکھیں ہماری رہ جائیں

کسی کو اتنا بھی کیا دیکھنا ضروری ہے

  • شیئر کیجیے

دستور ہی الگ ہے تری بزم ناز کا

الزام دے کے کہہ دیا الزام ہی تو ہے

  • شیئر کیجیے

میں اپنی آنکھوں سے دنیا کو جیت لاؤں گی

تو میرے پاؤں کی زنجیر دیکھتے رہنا

  • شیئر کیجیے

"گوالیار" کے مزید شعرا

 

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

Jashn-e-Rekhta | 2-3-4 December 2022 - Major Dhyan Chand National Stadium, Near India Gate, New Delhi

GET YOUR FREE PASS
بولیے