Momin Khan Momin's Photo'

مومن خاں مومن

1800 - 1852 | دلی, ہندوستان

غالب اور ذوق کے ہم عصر۔ وہ حکیم ، ماہر نجوم اور شطرنج کے کھلاڑی بھی تھے۔ کہا جاتا ہے کہ مرزا غالب نے ان کے شعر ’ تم مرے پاس ہوتے ہو گویا/ جب کوئی دوسرا نہیں ہوتا‘ پر اپنا پورا دیوان دینے کی بات کہی تھی

غالب اور ذوق کے ہم عصر۔ وہ حکیم ، ماہر نجوم اور شطرنج کے کھلاڑی بھی تھے۔ کہا جاتا ہے کہ مرزا غالب نے ان کے شعر ’ تم مرے پاس ہوتے ہو گویا/ جب کوئی دوسرا نہیں ہوتا‘ پر اپنا پورا دیوان دینے کی بات کہی تھی

غزل

اثر اس کو ذرا نہیں ہوتا

شمس الرحمن فاروقی

وہ جو ہم میں تم میں قرار تھا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

شمس الرحمن فاروقی

وہ جو ہم میں تم میں قرار تھا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

فہد حسین

اثر اس کو ذرا نہیں ہوتا

فصیح اکمل

اس وسعت_کلام سے جی تنگ آ گیا

فصیح اکمل

جوں نکہت_گل جنبش ہے جی کا نکل جانا

فصیح اکمل

دل قابل_محبت_جاناں نہیں رہا

فصیح اکمل

دیدۂ_حیراں نے تماشا کیا

فصیح اکمل

شوخ کہتا ہے بے_حیا جانا

فصیح اکمل

غیروں پہ کھل نہ جائے کہیں راز دیکھنا

فصیح اکمل

وعدۂ_وصلت سے دل ہو شاد کیا

فصیح اکمل

وہ جو ہم میں تم میں قرار تھا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو

نیرہ نور

ہم_رنگ لاغری سے ہوں گل کی شمیم کا

فصیح اکمل

یہ عذر_امتحان_جذب_دل کیسا نکل آیا

فصیح اکمل

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI