siyah hashiye

सआदत हसन मंटो

मकतबा जदीद, लाहौर
1952 | अन्य
  • सहयोगी

    इदारा-ए-अदबियात-ए-उर्दू, हैदराबाद

  • श्रेणियाँ

    अफ़साना

  • पृष्ठ

    65

पुस्तक: परिचय

परिचय

سعادت حسن منٹو سے کون واقف نہیں ہوگا ۔ ان کی تحریروں نے عام انسانی ضمیروں کو جھنجھوڑا ہے تو سیاست کے تاریک گلیاروں کو بھی آئینہ دکھایا ہے ۔ منٹونے اپنی تحریروں سے سب سے زیادہ سماج کا چہر ہ سامنے لایا ہے۔ ان کی اس کتاب میں وہ تمام افسانے نہیں ہیں جن کے لیے عرف عام میں انہیں جانا جاتا ہے بلکہ اس مجموعے میں ان کی چھوٹی چھوٹی تحریریں ہیں جو سیا ست پر گہر ی چوٹ کر تی ہیں ۔فسادات کے متعلق بہت ہی زیادہ افسانے لکھے گئے ہیں جو انسانیت کی ہولناکیوں پر مبنی ہوتی ہیں لیکن ان کی ان چھوٹی تحریروں پر محمد حسن عسکر ی لکھتے ہیں کہ ’’ فسادات کے متعلق جتنے بھی افسانے لکھے گئے ان میں منٹو کے یہ چھوٹے چھوٹے لطیفے سب سے زیادہ ہولناک اور رجائیت آمیز ہیں۔‘‘ اس میں تیس سے زائد چھوٹی اور درمیانی طنزیہ تحریریں ہیں جو یقینا فکر کو دعوت دیتی ہے ۔ منٹوکے دوسرے افسانوی مجموعے جس طرح سے لازوال تحریروں کے دائرے میں آتے ہیں اسی طریقے سے ان کا یہ بھی مجموعہ ادب کے قارئین کے لیے اہم ہے۔

.....और पढ़िए

लेखक की अन्य पुस्तकें

पूरा देखिए

लोकप्रिय और ट्रेंडिंग

पूरा देखिए

पुस्तकों की तलाश निम्नलिखित के अनुसार

पुस्तकें विषयानुसार

शायरी की पुस्तकें

पत्रिकाएँ

पुस्तक सूची

लेखकों की सूची

विश्वविद्यालय उर्दू पाठ्यक्रम