Rahat Indori's Photo'

راحتؔ اندوری

1950 | اندور, ہندوستان

مقبول شاعر اور فلم نغمہ

مقبول شاعر اور فلم نغمہ

غزل 63

اشعار 28

نہ ہم سفر نہ کسی ہم نشیں سے نکلے گا

ہمارے پاؤں کا کانٹا ہمیں سے نکلے گا

دوستی جب کسی سے کی جائے

دشمنوں کی بھی رائے لی جائے

  • شیئر کیجیے

اس کی یاد آئی ہے سانسو ذرا آہستہ چلو

دھڑکنوں سے بھی عبادت میں خلل پڑتا ہے

ای- کتاب 1

لمحے لمحے

راحت اندوری شاعر اور شخص

2002

 

تصویری شاعری 7

 

ویڈیو 52

This video is playing from YouTube

ویڈیو کا زمرہ
کلام شاعر بہ زبان شاعر
All India Mushaira - Katihar

راحتؔ اندوری

Datia Kavi Sammelan Part 1

راحتؔ اندوری

Datia Kavi Sammelan Part 2

راحتؔ اندوری

Datia Kavi Sammelan Part 3

راحتؔ اندوری

Datia Kavi Sammelan Part 4

راحتؔ اندوری

Datia Kavi Sammelan Part 5

راحتؔ اندوری

Datia Kavi Sammelan Part 6

راحتؔ اندوری

Datia Kavi Sammelan Part 7

راحتؔ اندوری

Datia Kavi Sammelan Part 8

راحتؔ اندوری

Datia Kavi Sammelan Part 9

راحتؔ اندوری

Flv Mushaira - 1993

راحتؔ اندوری

Hind-o-Pak Dosti Aalmi Mushaira 2007 Houston

راحتؔ اندوری

Jaipur Naatiya Mushaira - Part 1

راحتؔ اندوری

Jaipur Naatiya Mushaira - Part 2

راحتؔ اندوری

Rahat Indori - Indore Malwa Utsav 2014

راحتؔ اندوری

Rahat Indori on Sab TV

راحتؔ اندوری

Tehzeeb-e-Gango Jaman Mushaaira

راحتؔ اندوری

اب اپنی روح کے چھالوں کا کچھ حساب کروں

راحتؔ اندوری

اپنے دیوار_و_در سے پوچھتے ہیں

راحتؔ اندوری

اندر کا زہر چوم لیا دھل کے آ گئے

راحتؔ اندوری

اندھیرے چاروں طرف سائیں سائیں کرنے لگے

راحتؔ اندوری

بیٹھے بیٹھے کوئی خیال آیا

راحتؔ اندوری

تیری ہر بات محبت میں گوارا کر کے

راحتؔ اندوری

جا کے یہ کہہ دے کوئی شعلوں سے چنگاری سے

راحتؔ اندوری

جو منصبوں کے پجاری پہن کے آتے ہیں

راحتؔ اندوری

حوصلے زندگی کے دیکھتے ہیں

راحتؔ اندوری

دلوں میں آگ لبوں پر گلاب رکھتے ہیں

راحتؔ اندوری

دوستی جب کسی سے کی جائے

راحتؔ اندوری

رات کی دھڑکن جب تک جاری رہتی ہے

راحتؔ اندوری

روز تاروں کو نمائش میں خلل پڑتا ہے

راحتؔ اندوری

زندگی کی ہر کہانی بے_اثر ہو جائے_گی

راحتؔ اندوری

سب کو رسوا باری باری کیا کرو

راحتؔ اندوری

سسکتی رت کو مہکتا گلاب کر دوں_گا

راحتؔ اندوری

صرف خنجر ہی نہیں آنکھوں میں پانی چاہئے

راحتؔ اندوری

مجھے ڈبو کے بہت شرمسار رہتی ہے

راحتؔ اندوری

محبتوں کے سفر پر نکل کے دیکھوں_گا

راحتؔ اندوری

ندی نے دھوپ سے کیا کہہ دیا روانی میں

راحتؔ اندوری

نہ ہم_سفر نہ کسی ہم_نشیں سے نکلے_گا

راحتؔ اندوری

کام سب غیر_ضروری ہیں جو سب کرتے ہیں

راحتؔ اندوری

کہیں اکیلے میں مل کر جھنجھوڑ دوں_گا اسے

راحتؔ اندوری

ہاتھ خالی ہیں ترے شہر سے جاتے جاتے

راحتؔ اندوری

ہم نے خود اپنی رہنمائی کی

راحتؔ اندوری

ہوں لاکھ ظلم مگر بد_دعا نہیں دیں_گے

راحتؔ اندوری

یہ سرد راتیں بھی بن کر ابھی دھواں اڑ جائیں

راحتؔ اندوری

شعرا متعلقہ

  • وسیم بریلوی وسیم بریلوی ہم عصر
  • شاعر جمالی شاعر جمالی ہم عصر
  • ساغرؔ اعظمی ساغرؔ اعظمی ہم عصر
  • منور رانا منور رانا ہم عصر
  • معراج فیض آبادی معراج فیض آبادی ہم عصر

شعرا کے مزید "اندور"

  • عزیز انصاری عزیز انصاری
  • رازق انصاری رازق انصاری
  • وکاس جوشی واحد وکاس جوشی واحد
  • آتش اندوری آتش اندوری
  • مکیش اندوری مکیش اندوری
  • شاداں اندوری شاداں اندوری
 

Added to your favorites

Removed from your favorites