ساحل احمد

غزل 9

نظم 7

اشعار 10

کیوں چمک اٹھتی ہے بجلی بار بار

اے ستم گر لے نہ انگڑائی بہت

کس تصور کے تحت ربط کی منزل میں رہا

کس وسیلے کے تأثر کا نگہبان تھا میں

شیر گپھا سے نکلے گا

شور مچے گا جنگل میں

ان سے اے دوست مرا یوں کوئی رشتہ تو نہ تھا

کیوں پھر اس ترک تعلق سے پشیمان تھا میں

آج کنواں بھی چیخ اٹھا ہے

کسی نے پتھر مارا ہوگا

کتاب 61

"الہٰ آباد" کے مزید شعرا

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI