noImage

وزیر علی صبا لکھنؤی

1795 - 1885 | لکھنؤ, ہندوستان

دل میں اک درد اٹھا آنکھوں میں آنسو بھر آئے

بیٹھے بیٹھے ہمیں کیا جانئے کیا یاد آیا

بات بھی آپ کے آگے نہ زباں سے نکلی

لیجئے آئے تھے ہم سوچ کے کیا کیا دل میں

آپ ہی اپنے ذرا جور و ستم کو دیکھیں

ہم اگر عرض کریں گے تو شکایت ہوگی

نہ کریں آپ وفا ہم کو کیا

بے وفا آپ ہی کہلائیے گا

کہتے ہیں مرے دوست مرا حال دیکھ کر

دشمن کو بھی خدا نہ کرے مبتلائے عشق

آدم سے باغ خلد چھٹا ہم سے کوئے یار

وہ ابتدائے رنج ہے یہ انتہائے رنج

قید مذہب واقعی اک روگ ہی

آدمی کو چاہئے آزاد ہو

کلیجہ کانپتا ہے دیکھ کر اس سرد مہری کو

تمہارے گھر میں کیا آئے کہ ہم کشمیر میں آئے

اتنی تو دید عشق کی تاثیر دیکھیے

جس سمت دیکھیے تری تصویر دیکھیے

باقی رہا نہ فرق زمین آسمان میں

اپنا قدم اٹھا لیں اگر درمیاں سے ہم

میرے بغل میں رہ کے مجھی کو کیا ذلیل

نفرت سی ہو گئی دل خانہ خراب سے

تری تلاش میں مہ کی طرح میں پھرتا ہوں

کہاں تو رات کو اے آفتاب رہتا ہے

ہوا دھوپ میں بھی نہ کم حسن یار

کنھیا بنا وہ جو سنولا گیا

کعبہ بنائیے کہ کلیسا بنائیے

دل سا مکاں حوالے کیا ہے جناب کے

ساکن دیر ہوں اک بت کا ہوں بندہ بخدا

خود وہ کافر ہیں جو کہتے ہیں مسلماں مجھ کو

الفت کوچہ جاناں نے کیا خانہ خراب

برہمن دیر سے کعبے سے مسلماں نکلا

روز و شب فرقت جاناں میں بسر کی ہم نے

تجھ سے کچھ کام نہ اے گردش دوراں نکلا

کعبے کی سمت سجدہ کیا دل کو چھوڑ کر

تو کس طرف تھا دھیان ہمارا کدھر گیا

تمہاری زلف نہ گرداب ناف تک پہنچی

ہوئی نہ چشمۂ حیواں سے فیض یاب گھٹا

خود رفتگی ہے چشم حقیقت جو وا ہوئی

دروازہ کھل گیا تو میں گھر سے نکل گیا