Faragh Rohvi's Photo'

فراغ روہوی

1956 - 2020 | کولکاتا, انڈیا

فراغ روہوی

غزل 18

نظم 34

اشعار 18

خوب نبھے گی ہم دونوں میں میرے جیسا تو بھی ہے

تھوڑا جھوٹا میں بھی ٹھہرا تھوڑا جھوٹا تو بھی ہے

کسی نے راہ کا پتھر ہمیں کو ٹھہرایا

یہ اور بات کہ پھر آئینہ ہمیں ٹھہرے

ہمارے تن پہ کوئی قیمتی قبا نہ سہی

غزل کو اپنی مگر خوش لباس رکھتے ہیں

اک دن وہ میرے عیب گنانے لگا فراغؔ

جب خود ہی تھک گیا تو مجھے سوچنا پڑا

کھلی نہ مجھ پہ بھی دیوانگی مری برسوں

مرے جنون کی شہرت ترے بیاں سے ہوئی

دوہا 3

کیسے اپنے پیار کے سپنے ہوں ساکار

تیرے میرے بیچ ہے مذہب کی دیوار

  • شیئر کیجیے

بھول گئے ہر واقعہ بس اتنا ہے یاد

مال و زر پر تھی کھڑی رشتوں کی بنیاد

  • شیئر کیجیے

نفرت کے سنسار میں کھیلیں اب یہ کھیل

اک اک انساں جوڑ کے بن جائیں ہم ریل

  • شیئر کیجیے
 

کتاب 21

ویڈیو 6

This video is playing from YouTube

ویڈیو کا زمرہ
کلام شاعر بہ زبان شاعر

فراغ روہوی

فراغ روہوی

فراغ روہوی

متعلقہ شعرا

"کولکاتا" کے مزید شعرا

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

بولیے