Makhmoor Saeedi's Photo'

مخمور سعیدی

1938 - 2010 | دلی, ہندوستان

ممتازجدید شاعر/ رسالہ ’تحریک‘ سے وابستگی

ممتازجدید شاعر/ رسالہ ’تحریک‘ سے وابستگی

غزل 31

نظم 3

 

اشعار 20

میں اس کے وعدے کا اب بھی یقین کرتا ہوں

ہزار بار جسے آزما لیا میں نے

To this day her promises I do still believe

who a thousand times has been wont to deceive

  • شیئر کیجیے

بتوں کو پوجنے والوں کو کیوں الزام دیتے ہو

ڈرو اس سے کہ جس نے ان کو اس قابل بنایا ہے

  • شیئر کیجیے

گھر میں رہا تھا کون کہ رخصت کرے ہمیں

چوکھٹ کو الوداع کہا اور چل پڑے

دوہا 6

صاف بتا دے جو تو نے دیکھا ہے دن رات

دنیا کے ڈر سے نہ رکھ دل میں دل کی بات

  • شیئر کیجیے

ڈوبنے والوں پر کسے دنیا نے آوازے

ساحل سے کرتی رہی طوفاں کے اندازے

  • شیئر کیجیے

تنہا تو رہ جائے گا کوئی نہ ہوگا ساتھ

جیسے ہی یہ لوگ ہیں پکڑ انہی کا ہاتھ

  • شیئر کیجیے

کتاب 72

ایوان اردو کے منتخب افسانے

 

1995

اٹھارہ سو ستاون کی کہانی مرزا غالب کی زبانی

 

2007

اوراق زندگی

 

1971

اوراق زندگی

 

1971

اوراق زندگی

 

1971

آواز کا جسم

 

1972

آواز کا جسم

 

1972

بازدید

 

1989

بانس کے جنگلوں سے گزرتی ہوا

 

1983

بسمل سعیدی

شخص اور شاعر

 

تصویری شاعری 5

نئے نئے لفظ شور کرتے بڑھے چلے آ رہے ہیں فکر و خیال کی رہ_گزر آباد ہو رہی ہے زباں بہت سی پرانی حد_بندیوں سے آزاد ہو رہی ہے کئی فسانے جو ان_کہے تھے کئی تصور جو بے_زباں تھے ہزار عالم نشاط و غم کے جو پہلے نا_قابل_بیاں تھے وہ دھڑکنیں خامشی ہی جن کے خروش_پنہاں کی ترجماں تھی وہ نغمگی جو خموشیوں کے سیاہ زنداں میں پر_فشاں تھی اسے اب آخر کھلی فضاؤں میں اذن_پرواز مل گیا ہے کہ اک نیا رشتہ خیال_و_آواز مل گیا ہے مگر مجھے چپ سی لگ گئی ہے نئے نئے لفظ شور کرتے بڑھے چلے آ رہے ہیں اور میں ہجوم_پر_شور میں اکیلا پرانے لفظوں کو ڈھونڈتا ہوں یہ دیکھتا ہوں جہاں جہاں کل پرانے لفظوں نے ڈال رکھے تھے اپنے ڈیرے وہاں نئے لفظ آ کے آباد ہو گئے ہیں مکاں اگرچہ اجڑ نہ پائے مکین برباد ہو گئے ہیں نئے نئے لفظ شور کرتے بڑھے چلے آ رہے ہیں لیکن پرانے لفظوں کی پائمالی نے دم بہ_خود کر دیا ہے مجھ کو کسی نے سوچا نہیں ہے شاید مگر میں اکثر یہ سوچتا ہوں پرانے لفظوں کے ساتھ ہی اک پرانی دنیا بھی کھو گئی ہے خاموشیوں کے سیاہ_زنداں میں جا کے روپوش ہو گئی ہے

میں اس کے وعدے کا اب بھی یقین کرتا ہوں ہزار بار جسے آزما لیا میں نے

کچھ یوں لگتا ہے ترے ساتھ ہی گزرا وہ بھی ہم نے جو وقت ترے ساتھ گزارا ہی نہیں

 

ویڈیو 5

This video is playing from YouTube

ویڈیو کا زمرہ
کلام شاعر بہ زبان شاعر
chal pade hain to kahiin ja ke thaharna hoga

مخمور سعیدی

Laut kar apni taraf aa jaaun

مخمور سعیدی

Reading his poetry

مخمور سعیدی

Wo barf hoon main tuu mujhe chhoo le to pighal jaoon

مخمور سعیدی

آڈیو 12

جانب_کوچہ_و_بازار نہ دیکھا جائے

سینے میں کسک بن کے اترنے کے لیے ہے

غم و نشاط کی ہر رہ_گزر میں تنہا ہوں

Recitation

aah ko chahiye ek umr asar hote tak SHAMSUR RAHMAN FARUQI

متعلقہ شعرا

  • ساقی فاروقی ساقی فاروقی ہم عصر
  • عبید اللہ علیم عبید اللہ علیم ہم عصر
  • جون ایلیا جون ایلیا ہم عصر

"دلی" کے مزید شعرا

  • میر تقی میر میر تقی میر
  • شیخ ظہور الدین حاتم شیخ ظہور الدین حاتم
  • فرحت احساس فرحت احساس
  • بیخود دہلوی بیخود دہلوی
  • آبرو شاہ مبارک آبرو شاہ مبارک
  • شاہ نصیر شاہ نصیر
  • شیخ ابراہیم ذوقؔ شیخ ابراہیم ذوقؔ
  • حسرتؔ موہانی حسرتؔ موہانی
  • مومن خاں مومن مومن خاں مومن
  • محمد رفیع سودا محمد رفیع سودا