Mirza Ghalib's Photo'

مرزا غالب

1797 - 1869 | دلی, ہندوستان

عظیم شاعر۔ عالمی ادب میں اردو کی آواز۔ خواص و عوام دونوں میں مقبول۔

عظیم شاعر۔ عالمی ادب میں اردو کی آواز۔ خواص و عوام دونوں میں مقبول۔

ایک ایک قطرے کا مجھے دینا پڑا حساب

خون جگر ودیعت مژگان یار تھا

آ ہی جاتا وہ راہ پر غالبؔ

کوئی دن اور بھی جیے ہوتے

آئے ہے بیکسی عشق پہ رونا غالبؔ

کس کے گھر جائے گا سیلاب بلا میرے بعد

آئینہ دیکھ اپنا سا منہ لے کے رہ گئے

صاحب کو دل نہ دینے پہ کتنا غرور تھا

آئینہ کیوں نہ دوں کہ تماشا کہیں جسے

ایسا کہاں سے لاؤں کہ تجھ سا کہیں جسے

آنکھ کی تصویر سر نامے پہ کھینچی ہے کہ تا

تجھ پہ کھل جاوے کہ اس کو حسرت دیدار ہے

آگہی دام شنیدن جس قدر چاہے بچھائے

مدعا عنقا ہے اپنے عالم تقریر کا

آگے آتی تھی حال دل پہ ہنسی

اب کسی بات پر نہیں آتی

nothing now could even make me smile,

I once could laugh at my heart's own plight

nothing now could even make me smile,

I once could laugh at my heart's own plight

آہ کو چاہیئے اک عمر اثر ہوتے تک

کون جیتا ہے تری زلف کے سر ہوتے تک

A prayer needs a lifetime, an answer to obtain

who can live until the time that you decide to deign

A prayer needs a lifetime, an answer to obtain

who can live until the time that you decide to deign

آج ہم اپنی پریشانیٔ خاطر ان سے

کہنے جاتے تو ہیں پر دیکھیے کیا کہتے ہیں

آج واں تیغ و کفن باندھے ہوے جاتا ہوں میں

عذر میرے قتل کرنے میں وہ اب لاویں گے کیا

I will go with sword and coffin to her place today

What excuse, will she now find, my killing to delay

I will go with sword and coffin to her place today

What excuse, will she now find, my killing to delay

عاشق ہوں پہ معشوق فریبی ہے مرا کام

مجنوں کو برا کہتی ہے لیلیٰ مرے آگے

Though a lover I seduce my loved ones craftily

Laila speaks ill of Majnuu.n when in front of me

Though a lover I seduce my loved ones craftily

Laila speaks ill of Majnuu.n when in front of me

عاشقی صبر طلب اور تمنا بیتاب

دل کا کیا رنگ کروں خون جگر ہوتے تک

Love has a need for patience, desires are a strain

as long my ache persists, how shall my heart sustain

Love has a need for patience, desires are a strain

as long my ache persists, how shall my heart sustain

آتا ہے داغ حسرت دل کا شمار یاد

مجھ سے مرے گنہ کا حساب اے خدا نہ مانگ

آتے ہیں غیب سے یہ مضامیں خیال میں

غالبؔ صریر خامہ نوائے سروش ہے

آتش دوزخ میں یہ گرمی کہاں

سوز غم ہائے نہانی اور ہے

اب جفا سے بھی ہیں محروم ہم اللہ اللہ

اس قدر دشمن ارباب وفا ہو جانا

ادائے خاص سے غالبؔ ہوا ہے نکتہ سرا

صلائے عام ہے یاران نکتہ داں کے لیے

اگر غفلت سے باز آیا جفا کی

تلافی کی بھی ظالم نے تو کیا کی

اگلے وقتوں کے ہیں یہ لوگ انہیں کچھ نہ کہو

جو مے و نغمہ کو اندوہ ربا کہتے ہیں

These people are from other times nothing to them tell

They who think that wine and song can sorrows repel

These people are from other times nothing to them tell

They who think that wine and song can sorrows repel

اہل بینش کو ہے طوفان حوادث مکتب

لطمۂ موج کم از سیلئ استاد نہیں

اللہ رے ذوق دشت نوردی کہ بعد مرگ

ہلتے ہیں خود بہ خود مرے اندر کفن کے پاؤں

اپنا نہیں یہ شیوہ کہ آرام سے بیٹھیں

اس در پہ نہیں بار تو کعبہ ہی کو ہو آئے

اپنی گلی میں مجھ کو نہ کر دفن بعد قتل

میرے پتے سے خلق کو کیوں تیرا گھر ملے

In your street, do not inter me, when I cease to be

Why should people find your house when they look for me

In your street, do not inter me, when I cease to be

Why should people find your house when they look for me

اپنی ہستی ہی سے ہو جو کچھ ہو

آگہی گر نہیں غفلت ہی سہی

Should be with one's own being whatever that you see

If not with enlightenment then with ignorance let be

Should be with one's own being whatever that you see

If not with enlightenment then with ignorance let be

عرض نیاز عشق کے قابل نہیں رہا

جس دل پہ ناز تھا مجھے وہ دل نہیں رہا

اور بازار سے لے آئے اگر ٹوٹ گیا

ساغر جم سے مرا جام سفال اچھا ہے

were it to break, another one, can from the market get

this earthen cup of mine is better than Jamshed's goblet

were it to break, another one, can from the market get

this earthen cup of mine is better than Jamshed's goblet

بارہا دیکھی ہیں ان کی رنجشیں

پر کچھ اب کے سرگرانی اور ہے

بات پر واں زبان کٹتی ہے

وہ کہیں اور سنا کرے کوئی

My every word she contradicts alas

If I could, but, speak and she agree

My every word she contradicts alas

If I could, but, speak and she agree

بازیچۂ اطفال ہے دنیا مرے آگے

ہوتا ہے شب و روز تماشا مرے آگے

just like a child's playground this world appears to me

every single night and day, this spectacle I see

just like a child's playground this world appears to me

every single night and day, this spectacle I see

بہرا ہوں میں تو چاہئے دونا ہو التفات

سنتا نہیں ہوں بات مکرر کہے بغیر

بہت دنوں میں تغافل نے تیرے پیدا کی

وہ اک نگہ کہ بہ ظاہر نگاہ سے کم ہے

بیٹھا ہے جو کہ سایۂ دیوار یار میں

فرماں رواۓ کشور ہندوستان ہے

بک رہا ہوں جنوں میں کیا کیا کچھ

کچھ نہ سمجھے خدا کرے کوئی

Lord I pray that no one comprehends

All that I rant and rave in ecstasy

Lord I pray that no one comprehends

All that I rant and rave in ecstasy

بنا کر فقیروں کا ہم بھیس غالبؔ

تماشائے اہل کرم دیکھتے ہیں

بندگی میں بھی وہ آزادہ و خودبیں ہیں کہ ہم

الٹے پھر آئے در کعبہ اگر وا نہ ہوا

بسکہ دشوار ہے ہر کام کا آساں ہونا

آدمی کو بھی میسر نہیں انساں ہونا

Tis difficult that every goal be easily complete

For a man, too, to be human, is no easy feat

Tis difficult that every goal be easily complete

For a man, too, to be human, is no easy feat

بسکہ ہوں غالبؔ اسیری میں بھی آتش زیر پا

موئے آتش دیدہ ہے حلقہ مری زنجیر کا

بے در و دیوار سا اک گھر بنایا چاہیئے

کوئی ہمسایہ نہ ہو اور پاسباں کوئی نہ ہو

One should build an open house, no walls nor doors to see

No neighbours to surround nor guards for security

One should build an open house, no walls nor doors to see

No neighbours to surround nor guards for security

بے عشق عمر کٹ نہیں سکتی ہے اور یاں

طاقت بقدر لذت آزار بھی نہیں

بے خودی بے سبب نہیں غالبؔ

کچھ تو ہے، جس کی پردہ داری ہے

بے نیازی حد سے گزری بندہ پرور کب تلک

ہم کہیں گے حال دل اور آپ فرماویں گے کیا

All bounds, your callousness exceeds, do tell me until when

My feelings I keep pouring out, your asking me what then?

All bounds, your callousness exceeds, do tell me until when

My feelings I keep pouring out, your asking me what then?

بے پردہ سوئے وادی مجنوں گزر نہ کر

ہر ذرہ کے نقاب میں دل بیقرار ہے

بھاگے تھے ہم بہت سو اسی کی سزا ہے یہ

ہو کر اسیر دابتے ہیں راہزن کے پانو

I'm punished in this manner as I tried to run away

I'm the robber's prisoner and press his feet today

I'm punished in this manner as I tried to run away

I'm the robber's prisoner and press his feet today

بساط عجز میں تھا ایک دل یک قطرہ خوں وہ بھی

سو رہتا ہے بہ انداز چکیدن سرنگوں وہ بھی

بوسہ دیتے نہیں اور دل پہ ہے ہر لحظہ نگاہ

جی میں کہتے ہیں کہ مفت آئے تو مال اچھا ہے

بوسہ کیسا یہی غنیمت ہے

کہ نہ سمجھے وہ لذت دشنام

بلبل کے کاروبار پہ ہیں خندہ ہائے گل

کہتے ہیں جس کو عشق خلل ہے دماغ کا

بوئے گل نالۂ دل دود چراغ محفل

جو تری بزم سے نکلا سو پریشاں نکلا

چاہیے اچھوں کو جتنا چاہیے

یہ اگر چاہیں تو پھر کیا چاہیے

Added to your favorites

Removed from your favorites